Select Page

Free e-BookS

download & Read online

The MIR Books a non-profit, is building a digital library of  Internet sites and other cultural artifacts in digital form. Like a paper library, we provide free access to researchers, historians, scholars, the print disabled, and the general public. Our mission is to provide Universal Access to All Knowledge.

Tafsir Fi Zilal:

Picture

In the Shade of the Qur’an or Fi Zilal al-Qur’an (Arabic: في ظِلالِ القرآن‎, fī ẓilāl al-qur’ān) is a highly influential commentary of the Qur’an, written during 1951-1965 by Sayyid Qutb Shaheed (1906-1966), a leader within the Muslim Brotherhood. Most of the original volumes were written while in prison. The book outlines Qutb’s vision of an Islamic state and society. It is considered by some to be a comprehensive and far-reaching commentary that takes a clear and lucid interpretation of the Qur’an. Following paper discusses Syed Qutub’s approach in this tafsir:
http://www.ijhssnet.com/journals/Vol._1_No._8;_July_2011/30.pdf

Criticism:
This tafseer has been a subject to a lot of criticism as well. Following is one of the articles highlighting some errors.

  • Serious errors in Sayyid Qutb’s Tafsir “Fi ThilalilQuran” – Read
  • Shaykh Salih al­Fawzaan on the Tafsir of Sayyid Qutb,’Fee Zilaal il­Quran’ – Read
  • Tafseer Ibn Katheer or Fee Dhilaal-il-Qur’aan? – AUTHOR: Imaam Muqbil bin Haadee Al-Waadi’ee – Read
  •  The Mistakes and Innovations of Sayyid Qutb (Salafi Publications) – Read

Tafsir Siraj ul Bayan – Urdu

Picture

Vol 1: Read / Download
Vol 2: Read / Download
Vol 3: Read / Download
Vol 4: Read / Download
Vol 5: Read / Download

TAFSEER AS-SAADI

Arabic:
Download pdf
(Click here to download audios)
Usool Tafseer As-Saadi – Mp3 download (4.7 MB)

Russian:
Vol 1 (Read / Download), Vol 2 (Read / Download), Vol 3 (Read / Download)

English:
(Fatiha and Juz 30)
Download (1 MB)
Book Review (Journal Paper written by Malaysian students)

Urdu:

اللہ عزوجل نے لوگوں تک اپنا پیغام پہنچانےکے لیے جو کتابیں نازل فرمائیں،قرآن حکیم ان میں آخری کتاب ہے جو تاقیامت بنی نوع انسان کے لیے ہدایت ورہنمائی کا ذریعہ ہے ۔قرآن کے مطالب و مفاہیم کو اجاگر کرنے کی ذمہ داری جناب نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو سونپی گئی اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے بہ طریق احسن سرانجام دیا۔بعد ازاں مفسرین عظام نے حدیث نبوی اور ارشادات صحابہ رضی اللہ عنہم کی روشنی میں قرآنی مطالب کو لوگوں تک پہنچایا۔اس فن میں اب تک بے شمار تفاسیر مختلف زبانوں میں لکھی جا چکی ہیں اور یہ سلسلہ اب تک جاری ہے۔علامہ عبدالرحمٰن بن ناصر سعدی رحمہ اللہ کی تفسیر بھی معتبر کتب تفاسیر میں شمار ہوتی ہے ۔آپ سعودی عرب کے نام ور عالم دین تھے۔زیر نظر ’تفسیر السعدی‘کی متعدد خصوصیات ہیں،مثلا:یہ اسرائیلی اور ضعیف روایات سے پاک ہے،قصص وواقعات سے عبر وحکم کا استنباظ بھی خوب اور نہایت عجیب ہے۔یہ تفسیر اختصار اور جامعیت کا حسین امتزاج ہے۔تفسیر میں منہج سلف کی پابندی کی گئی ہے۔آج کے مادی دور میں قرآنی حکمت وموعظت کے حصول کے لیے یہ تفسیر انتہائی مفید ہے ،جس کا مطالعہ ہر مسلمان کو کرنا چاہیے تاکہ وہ قرآن حکیم سے اپنے تعلق کو استوار کر سکے اور فلاح و کامرانی سے بہرہ مند ہو سکے۔

Tafseer Sanai
Molana Sanaullah Amritsary

Picture

Vol1: Read / Download
Vol2: Read / Download
Vol3: Read / Download
دینی علوم میں کتاب اللہ کی تفسیر وتاویل کا علم اشرف علوم میں شمار ہوتا ہے۔ ہر دور میں ائمہ دین نے کتاب اللہ کی تشریح وتوضیح کی خدمت سر انجام دی ہے تا کہ عوام الناس کے لیے اللہ کی کتاب کو سمجھنے میں کوئی مشکل اور رکاوٹ پیش نہ آئے۔ سلف صالحین ہی کے زمانہ ہی سے تفسیر قرآن، تفسیر بالماثور اور تفسیر بالرائے کے مناہج میں تقسیم ہو گئی تھی۔ صحابہ رضی اللہ عنہم ، تابعین عظام اور تبع تابعین رحمہم اللہ اجمعین کے زمانہ میں تفسیر بالماثور کو خوب اہمیت حاصل تھی اور تفسیر کی اصل قسم بھی اسے ہی شمار کیا جاتا تھا۔ تفسیر بالماثور کو تفسیر بالمنقول بھی کہتے ہیں کیونکہ اس میں کتاب اللہ کی تفسیر خود قرآن یا احادیث یا اقوال صحابہ یا اقوال تابعین و تبع تابعین سے کی جاتی ہے۔


مفسر قرآن ، فاتح قادیان ،کثیرالتصانیف مولانا ثناء اللہ امرتسری  کی شخصیت کسی تعارف کی محتاج نہیں ہے۔آپ 1868ء امرتسر میں پیدا ہوئے،اورمولانا سیّد نذیر حسین دہلوی  سے اکتساب علم کیا۔ ہفت روزہ ’’اخبار اہل حدیث‘‘ کے مدیر اور مؤسس تھے۔ادیانِ باطلہ پر گہری نظر تھی۔عیسائیت ، آریہ سماج ہندووں، قادیانیت اور تقلید کے ردمیں متعدد کتابیں لکھیں۔آپ نے سیرت مبارکہ صلی اللہ علیہ و سلم پر تین کتابیں تالیف کی تھیں


یہ کتاب اس زمانے میں لکھی گئی جب مسلمان انگریزی حکومت کے جبر واستبداد کا شکار تھے۔انگریزی استعمار کا فتنہ زوروں پر تھا ۔پورے ملک میں عیسائی مشنریاں سر گرم تھیں۔


 یہ تفسیر بھی تفسیر بالماثور ہے جس میں حسب موقع مختصر شرح ساتھ ساتھ کر دی گئی ہے اس کےعلاوہ مخالفین اسلام کے اعتراضات کا جواب بھی وقتاً فوقتاً دیا گیا ہے۔ بعض مقامات کے حل مطالب کے لیے شان نزول کا ذکر بھی کیا گیا ہے ہر آیت میں جہاں تک منقول تھا اس کو بھی نقل کیا گیا ہے۔مکتبہ قدوسیہ نے اس تفسیر کو تین جلدوں میں شائع کیا ہے جس کو ہم ہدیہ قارئین کر رہے ہیں۔
Picture
Arabic:                          =
Muqaddimah(Read / Download)
Vol01: Read / Download
Vol02: Read / Download
Vol03: Read / Download
Vol04: Read / Download
Vol05: Read / Download
Vol06: Read / Download
Vol07: Read / Download
Vol08: Read / Download
Vol09: Read / Download
Vol10: Read / Download
Vol11: Read / Download
Vol12: Read / Download

Vol13: Read / Download
Vol14: Read Download
Vol15: Read / Download
Vol16: Read / Download
Vol17: Read / Download
Vol18: Read / Download
Vol19: Read / Download
Vol20: Read / Download
Vol21: Read / Download
Vol22: Read / Download
Vol23: Read / Download
Vol24: Read / Download

Tafsir Al- Qurtubi is a common term used for “Al-Jami li-Ahkam al-Qur’an” translated as ‘The Compendium of Legal Rulings of the Qur’an’ written by eminent classical scholar, Imam Al-Qurtubi.

The basic objective of this book was to deduce juristic injunctions and rulings from the Qur’an yet, while doing so, he has also provided the explanation of verses, research into difficult words, discussion of diacritical marks and elegance of style and composition, and related Traditions and Reports in his Tafsir, and quite ably so. This book is in twelve volumes and has been published repeatedly.

Comprehensive interpretation of the Holy Qur’an requires consideration of every aspect – spiritual, legal, linguistic, social, and others. While this Tafsir covers them all, imam al-Qurtubi was especially concerned to bring out the legal implications of the Qur’anic text, and his work emphasizes the practical applications of the Revelation.

This gives it particular relevance to those Interested in learning how the Qur’an informs the daily life of the Muslims. on both the individual and the communal level. The author also explains the diversity of the Various readings (qira’at) and explores the alternative interpretations that can be derived from them.

’تفسیر قرطبی‘ ایک ایسا نام ہے جو گزشتہ آٹھ صدیوں سے اہل علم کے ہر طبقہ میں یکساں مقبول ہے۔ اس کی جامعیت اور علمی وسعت کے پیش نظر اگر اسے مسلم سپین کی تہذیب و ثقافت کی درخشاں یادگار تالیف کہا جائے تو بے جانہ ہو گا۔ کہنے کو تو یہ بھی قرآن کریم کے قانونی مطالعہ کی کتاب ہے مگر حقیقت یہ ہے کہ مطالعہ قرآن کا قانونی پہلو ہو یا عام تفسیری انداز، تفسیر قرطبی علوم اسلامیہ کے تمام پہلوؤں پر ایک جامع دستاویز ہے۔ فقہ و اصول فقہ میں تمام مروجہ مکتب ہائے فکر کا تقابلی مطالعہ اس کا امتیاز ہے۔ اس طرح قانون دان طبقہ کے لیے یہ کتاب حوالہ کا درجہ رکھتی ہے، علما و محققین کے لیے علوم دینیہ کا دائرہ معارف ہے، خطبا اور واعظین کے لیے لا تعداد موضوعات کا خزینہ ہے اورذاکرین کے لیے فضائل و معارف کا مجموعہ ہے۔ اردودان طبقہ کی سہولت کے لیے اس کو اردو قالب میں پیش کیا جا رہا ہے۔ ترجمہ میں آسان اردو محاورہ استعمال کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ احادیث کی تخریج حتی الامکان مستند کتب سے کی گئی ہے اور حسب ضرورت توضیحی حواشی کا بھی اضافہ کردیا گیا ہے۔ امام قرطبی رحمۃ اللہ علیہ کےتعلیمی مراحل اور علمی مقام کا ایک مربوط خاکہ ان کی اپنی تالیفات کے شواہد کے ساتھ شروع میں پیش کردیا گیا ہے۔

Vol01: Read / Download

Translation by Maulana Karam Shah Al-Azhary:
Vol01: Read Download
Vol02: Read Download
Vol03: Read Download
Vol04: Read Download
Vol05: Read Download
Vol06: Read Download
Vol07: Read Download
Vol08: Read Download
Vol09: Read Download
Vol10: Read Download

Tafsir Jalalayn

By Imam Jalal ud Din Suyuti
Tafsir al-Jalalayn is one of the most significant tafsirs for the study of the Qur’an. Composed by the two “Jalals” — Jalal al-Din al-Mahalli (d. 864 ah / 1459 ce) and his pupil Jalal al-Din al-Suyuti (d. 911 ah / 1505 ce), Tafsir al-Jalalayn is generally regarded as one of the most easily accessible works of Qur’anic exegesis because of its simple style and reasonable level of detail.
يعتبر تفسير الجلالين من أهم كتب التفسير لدراسة القران الكريم. لقد ألفه جلال الدين المحلي (توفي 864 هـ \ 1459 م) وتلميذه جلال الدين السيوطي (توفي 911 هـ \ 1505 م) اللذَيْن لقّبا بالجلالين. ويعتبر تفسير الجلالين من أسهل التفاسير قراءةً لأسلوبه المبسط

Bangla
Part1, Part2

English:
Read / Download

There is another more professionally compiled english version of this tafsir available from attafsir.com (run by Government of Jordan). 
It can be accessed from here: 
Read / Download 

This english translation is done by Aal Al Bayt Institute of Jordan which is NOT a shia organization and is run by Government of Jordan. It, however, translates BOTH, sunni and shia books. Tafsir Jalalain is a sunni book written by Imam Jalal ud Din Suyuti. Library is unsure about the correctness of this translation and have not come across any views from Ulema (religious scholars) about this. Users need to verify it for correctness with scholars themselves before using it. Basis of our doubt is educational background of translator (Ismaili studies).

Urdu:

1) Kamalayn – Urdu Sharh:
Vol1: Read / Download
Vol2: Read / Download
Vol3: Read / Download
Vol4: Read / Download
Vol5: Read / Download
Vol6: Read / Download

2) Jamalayn – Urdu Sharh:
Vol1: Read / Download
Vol2: Read / Download
Vol3: Read / Download
Vol4: Read / Download
Vol5: Read / Download
Vol6: Read Download

3) Sharah Jalalain (Misbahain)
(Maslak Brelviyyah)

Download: Vol1Vol2, Vol3, Vol4, Vol5, Vol6, Vol7

4) Attaeen – Sharah Jalalain
Ata Aeen Tafseer E Jalalain Complete
عطائین تفسیر جلالین
(Maslak Brelviyyah)

Download: Jild1, Jild2, Jild3, Jild4, Jild5

مکمل 5 جلدیں 1 فائیل میں
Read / Download

5) Hashia Anwar al Haramain
Mufti Muhammad Farooq
(Maslak Brelviyyah)

Download: Vol1, Vol2
(Uptill Surah Tauba)

Arabic:

Beautiful colored version from Dar Ibn Kathir:
Part1: Read / Download  (Cover and Intro)
Part2: Read / Download

المفصل في تفسير القرآن الكريم المشهور بتفسير الجلالين
المؤلف: جلال الدين المحلي – جلال الدين السيوطي
 المحقق: فخر الدين قباوة
Part1: Read / Download
Part2: Read / Download

تفسير الجلالين
جلال الدين المحلي، جلال الدين السيوطي
مكتبة الإيمان بالمنصورة
Read / Download

Al-Bushra Publishers:
Part1: Read / Download
Part2: Read / Download
Part3: Read / Download

Nuskha from Qadeemi Kutub Khana
Read / Download

Nuskha from Maktabah Rahmaniya
Read / Download

Halalain
Rukn ud Din Turab Ali
Download (partial)

تسہیل الجلالین
شرح اُردو جلالین شریف – شرح صرف
 سورۃ بقرۃ ، سورۃ آل عمران اور سورۃ نساء

مولانا اعظمیؒ کی وفات کی وجہ سے یہ شرح نا مکمل رہ گئی۔

:شرح میں منھج
تفسیر کا مع متن قرآنی ترجمہ
تفسیری عبارات کی توضیح و تشریح
تفسیر جلالین کی روشنی میں آیات کے مضامین کا مختصرا بیان
فقہ حنفی کی رو سے آیات کے مضامین کا مختصرا بیان

:مؤلف
حضرت مولانا اعجاز احمد اعظمی قدس اللہ سرہ
Download

Mukhatar Jalalain – Historical Manuscript

Read / Download

Another historical Manuscript
Read / Download

Picture
شرح وتعليق على تفسير الجلالين
الشيخ الدكتور عبدالرحمن عبدالخالق حفظه الله
Mp3 files can be downloaded from here.

Tafsir Majidi

Picture

Urdu:
Read / Download

Alternate
(first four volumes only)
Volume-01
Volume-02
Volume-03
Volume-04

English:
Vol1: Read / Download
Vol2: Read / Download
Vol3:            Download
Vol4:            Download

Abdul Aleem Qidwai, Nephew and Son-in-Law of Molana Abdul Majid Daryabadi, mentioned about his works as follows:
He is the only aalim of India and Pakistan who has translated the Holy Quran along with its exegesis in English and Urdu, with the Glorious Quran and Tafsir-e-Majidi respectively. His works are acceptable to the jamhur and represent Hanafi views. He has taken great pains to make a comparative study of Judaism and Christianity and established the supremacy of Islam throught geographical and historical evidence. He was a well-read scholar of modern times and spent about ten years in the state of ilhaad, “rationalism” and agnosticism. Then he reverted to the right path and became an ardent disciple of Mualana Ashraf Ali Thanvi, Maulana Husain Ahmad Madni and associated himself with Deoband and Nadwa. 

His exegesis is very useful for English knowing people. It was published first by Taj Publishing Company, Lahore, then it was published by Majlis-e-Tahqeeqat wa Nashriyaat-e-Islam, Nadwa-tul-Ulema, Lucknow and recently by the Islamic Foundation, Markfield, United Kingdom has published the English translation and tafsir is one volume; “The Glorious Quran” and can be had from them. Another edition has also been published by had from Nadwa-tul-Ulema, Tagore Road, Lucknow.

Tafsir Ibn Abbas (Tanvir Al Miqbas) – تنوير المقباس من تفسير ابن عباس على هامش المصحف الأميري

Picture

Hadith scholars have expressed doubts about authenticity of this collection and if it actually is from Ibn Abbas R.A. based on critical studies in ‘Usool Al-Hadith’ which has found many narrations in this to be weak (Reference: Dr. Bilal Philips lecture recordings on Usool Al Hadith at IOU)

Urdu:
Vol1: Read Download
Vol2: Read / Download
Vol3: Read / Download

Arabic:
عنوان الكتاب: تنوير المقباس من تفسير ابن عباس على هامش المصحف الأميري
 المؤلف: ينسب إلى: عبد الله بن عباس – جمعه: مجد الدين أبو طاهر محمد بن يعقوب الفيروزآبادى
Read / Download

English: (Please read the note below)
Read / Download

There are a couple of important points that are required to be kept in mind.
1. English translation provided above is from Aal-Al Bayt Foundation which is not a shia organization and is run by Government of Jordan.
2. As explained above, authenticity of this tafsir’s attribution to Ibn Abbas R.A. is not authenticated. Advice should be sought from authentic Islamic scholar with regards to this matter.

Tafseer Al Kabir by Imam Al-Razi

Al-Tafsir al-Kabir (“The Large Commentary”), also known as Mafatih al-Ghayb (“Keys to the Unknown”) is a classical Islamic Tafsir book, written by the well-known Persian Islamic theologian and philosopher Muhammad ibn Umar Fakhr al-Din al-Razi (1149-1209). The book is an exegesis and commentary on the Qur’an. At 32 Volumes, it is larger than the 28 Volume Tafsir of At-Tabari named Jami’ Al-Bayan. 

Your content goes here. Edit or remove this text inline or in the module Content settings. You can also style every aspect of this content in the module Design settings and even apply custom CSS to this text in the module Advanced settings.

Review in Urdu:

​تفسیر کبیر کا تعارف 
Ammar Nasir, 2002
(Published in Mahanama Ishraq, Lahore, Pakistan)

’’مفاتیح الغیب‘‘ یعنی تفسیر کبیر کا شمار تفسیر بالرائے کے طریقہ پر لکھی گئی اہم ترین تفاسیر میں ہوتا ہے۔ اس کی تصنیف چھٹی صدی ہجری کے نام ور عالم اور متکلم امام محمد فخر الدین رازی (۵۴۳ھ ۔ ۶۰۶ھ) نے شروع کی ، لیکن اس کی تکمیل سے قبل ہی ان کا انتقال ہو گیا ۔ بعد میں اس کی تکمیل، حاجی خلیفہ کی رائے کے مطابق قاضی شہاب الدین بن خلیل الخولی الدمشقی نے اور ابن حجر کی رائے کے مطابق شیخ نجم الدین احمد بن محمد القمولی نے کی۔ یہ بات بھی معین طور پر معلوم نہیں کہ تفسیر کا کتنا حصہ خود امام صاحب لکھ پائے تھے ۔ ایک قول کے مطابق سورۂ انبیا تک ، جبکہ دوسرے قول کے مطابق سورۂ فتح تک تفسیر امام صاحب کی اپنی لکھی ہوئی ہے۔ ۱؂ تاہم اس معاملے میں سب سے زیادہ تشفی بخش اور مدلل نقطہ نظر الاستاذ عبد الرحمن المعلمی نے اپنے مضمون ’’حول تفسیر الفخر الرازی‘‘ میں اختیار کیا ہے۔ انھوں نے مضبوط داخلی شواہد سے ثابت کیا ہے کہ تفسیر کے درج ذیل حصے خود امام صاحب نے لکھے ہیں ، جبکہ باقی اجزا الخولی یا القمولی کے لکھے ہوئے ہیں:
۱۔ سورۂ فاتحہ تا سورۂ قصص
۲۔ سورۂ صافات ، سورۂ احقاف
۳۔ سورۂ حشر، مجادلہ اور حدید
۴۔ سورۂ ملک تا سورۂ ناس ۲؂

خصوصیات
جامعیتتفسیر کبیر کی نمایاں ترین خصوصیت، جس کا اعتراف اکابر اہل علم نے کیا ہے، اس کی جامعیت ہے۔ وہ جس مسئلہ پر لکھتے ہیں، اس کے متعلق جس قدر مباحث ان سے پہلے پیدا ہو چکے ہیں، ان سب کا استقصا کر دیتے ہیں۔ محمد حسین ذہبی لکھتے ہیں :
’’رازی کی تفسیر کو علما کے ہاں عام شہرت حاصل ہے کیونکہ دوسری کتب تفسیر کے مقابلے میں اس کا امتیاز یہ ہے کہ اس میں مختلف علوم سے متعلق وسیع اور بھرپور بحثیں ملتی ہیں۔ ‘‘(التفسیر والمفسرون۱/ ۲۹۳)
علامہ انور شاہ صاحب کشمیری فرماتے ہیں :
’’قرآن کریم کی مشکلات میں مجھے کوئی مشکل ایسی نہیں ملی جس سے امام رازی نے تعرض نہ کیا ہو، یہ اور بات ہے کہ بعض اوقات مشکلات کا حل ایسا پیش نہیں کر سکے جس پر دل مطمئن ہوجائے۔ ‘‘ (البنوری، محمد یوسف ،یتیمۃ البیان ۲۳)

طریق تفسیرہر آیت کی تفسیر میں امام صاحب کا طریقہ حسب ذیل ہے:
۱۔ آیت کی تفسیر، نحوی ترکیب، وجوہ بلاغت اور شان نزول سے متعلق سلف کے تمام اقوال نہایت مرتب اور منضبط انداز میں پوری شرح ووضاحت سے بیان کرتے ہیں۔
۲۔ آیت سے متعلق فقہی احکام کا ذکر تفصیلی دلائل سے کرتے ہیں اور امام شافعی رحمہ اللہ علیہ کے مذہب کو ترجیح دیتے ہیں۔
۳۔ متعلقہ آیات کے تحت مختلف باطل فرقوں مثلاً جہمیہ، معتزلہ، مجسمہ وغیرہ کا استدلال تفصیل سے ذکر کر کے اس کی تردید کرتے ہیں۔
ان میں سے پہلے دو امور کا ذکر اگرچہ دوسرے اہل تفسیر بھی کرتے ہیں ، لیکن یہ ذخیرہ ان میں منتشر اور بکھرا ہوا ہے، جبکہ تفسیر کبیر میں یہ تمام مباحث یک جا مل جاتے ہیں۔ البتہ تیسرے امر کے اعتبار سے تفسیر کبیر اپنی نوعیت کی منفردتفسیر ہے۔
ترجیح و محاکمہامام صاحب نے اپنی تفسیر میں جمع اقوال پر اکتفا نہیں کی ،بلکہ دلائل کے ساتھ بعض اقوال کو ترجیح دینے کا طریقہ اختیار کیا ہے۔ اس سے تفسیر کے متعلقہ علوم وفنون میں ان کی دسترس کا اندازہ کیا جا سکتا ہے۔ اس طرح یہ تفسیر گویا سابقہ تفسیری ذخیرے پر ایک محاکمہ کا درجہ رکھتی ہے۔
مختلف تفسیری اقوال میں ترجیح قائم کرتے ہوئے امام صاحب بالعموم حسب ذیل اصول پیش نظر رکھتے ہیں :
۱۔ اگر کسی قول کی تائید میں صحیح حدیث موجود ہو تو اس کو ترجیح دیتے ہیں۔
’ونفخ فی الصور‘ کی تفسیر میں تین اقوال نقل کرتے ہیں: ایک یہ کہ صور ایک آلہ ہے ، جب اس کو پھونکا جائے گا تو ایک بلند آواز پیدا ہوگی ۔ اس کو خداوند تعالیٰ نے دنیا کی بربادی اور اعادۂ اموات کی علامت قرار دیا ہے۔ دوسرا یہ کہ یہ لفظ بفتح الواو ہے اور ’صورۃ‘ کی جمع ہے ۔ مراد یہ ہے کہ ’’جب صورتوں میں روح پھونکی جائے گی۔‘‘ تیسرا یہ کہ یہ ایک استعارہ ہے جس کا مقصد مردوں کا اٹھانا اور ان کو جمع کرنا ہے۔ امام رازی نے ان اقوال میں سے پہلے قول کو اس بنا پر ترجیح دی ہے کہ اس کی تائید میں رسول اللہ کی حدیث موجود ہے۔ ۳؂
۲۔ جو مفہوم عقل کے مطابق ہو، اس کو راجح قرار دیتے ہیں۔
سورۂ نساء کی آیت ’خلقکم من نفس واحدۃ وخلق منھا زوجھا‘ کی تفسیر میں عام مفسرین کا خیال یہ ہے کہ حضرت حوا علیہا السلام کو حضرت آدم علیہ السلام کی پسلی سے پیدا کیا گیا اور اس کی تائید میں حدیث بھی موجود ہے۔ لیکن امام رازی ابو مسلم کی تفسیر کو ترجیح دیتے ہیں جن کے نزدیک اس آیت کا مطلب یہ ہے کہ اللہ نے آدم علیہ السلام کی جنس سے ان کی بیوی کو پیدا کیا۔ امام صاحب کہتے ہیں کہ جس طرح اللہ تعالیٰ حضرت آدم علیہ السلام کو مٹی سے پیدا کر سکتے تھے، اسی طرح حضرت حوا علیہا السلام کو بھی کر سکتے تھے، پھر ان کو حضرت آدم علیہ السلام کی پسلی سے پیدا کرنے کی کیا ضرورت تھی؟ ۴؂
اسی طرح سورۂ کہف میں ذو القرنین کے قصہ میں ارشاد باری ہے :
حَتّٰی اِذَا بَلَغَ مَغْرِبَ الشَّمْسِ وَجَدَھَا تَغْرُبُ فِیْ عَیْنٍ حَمِءَۃٍ ۔ ( الکہف ۱۸: ۸۶)
’’یہا ں تک کہ جب وہ آفتاب کے غروب ہونے کے مقام پر پہنچا تو سورج کو کیچڑ کی ایک نہر میں ڈوبتے دیکھا۔‘‘
اس کی تفسیر میں ایک قول یہ ہے کہ سورج درحقیقت کیچڑ میں ڈوبتا ہے ، لیکن امام رازی کے نزدیک یہ تفسیر بالکل عقل کے خلاف ہے ، کیونکہ سورج زمین سے کئی گنا بڑا ہے اس لیے وہ زمین کی کسی نہر میں کیسے ڈوب سکتا ہے؟ ۵؂
۳۔ جب تک کسی لفظ کا حقیقی اور معروف معنی مراد لینا ممکن ہو، اس وقت تک اس کا مجازی یا غیر معروف معنی مراد نہیں لیتے۔
مثلاً حضرت نوح علیہ السلام کے واقعہ میں ’وفار التنور‘کی تفسیر میں فرماتے ہیں کہ لفظ ’تنور‘ کی تفسیر میں متعدد اقوال ہیں۔ ایک یہ کہ اس سے مراد وہی تنور ہے جس میں روٹی پکائی جاتی ہے۔ دوسرا یہ کہ اس سے مراد سطح زمین ہے۔ تیسرا یہ کہ اس سے مراد زمین کا بلند حصہ ہے۔ چوتھا یہ کہ اس سے مراد طلوع صبح ہے۔ پانچواں یہ کہ یہ محاورتاً واقعہ کی شدت کی تعبیر ہے۔ ان اقوال کو نقل کرنے کے بعد امام رازی لکھتے ہیں کہ اصل یہ ہے کہ کلام کو حقیقی معنی پر محمول کرنا چاہیے اورحقیقی معنی کے لحاظ سے تنور اسی جگہ کو کہتے ہیں جہاں روٹی پکائی جاتی ہے۔ ۶؂
اسی طرح ’ومن یغلل یات بما غل یوم القیامۃ‘،’ ’جس نے مال غنیمت میں خیانت کی، وہ اس مال کے ساتھ قیامت کے دن حاضر ہوگا‘‘ کی تفسیر میں دو قول نقل کرتے ہیں : ایک یہ کہ حقیقتاً ایسا ہی ہوگا ۔ دوسرا یہ کہ اس تعبیر سے محض عذاب کی سختی بیان کرنا مقصود ہے۔ پھر لکھتے ہیں کہ علم قرآن میں جو اصول معتبر ہے، وہ یہ ہے کہ لفظ کو اس کے حقیقی معنی پر قائم رکھنا چاہیے ، الا یہ کہ کوئی اور دلیل اس سے مانع ہو۔ یہاں چونکہ ظاہری معنی مراد لینے میں کوئی مانع نہیں اس لیے اسی کو قائم رکھنا چاہیے۔۷ ؂
۴۔ اس قول کو مختار قرار دیتے ہیں جو کلام کی نحوی ترکیب کے وجوہ میں سے بہتر وجہ کے مطابق ہو۔
سورۂ بقرہ کی آیت ’ولکن الشیاطین کفروا یعلمون الناس السحر وما انزل علی الملکین‘ کی تفسیر میں مفسرین کا اختلاف ہے کہ ’ما انزل‘ میں ’ما ‘ نافیہ ہے یا موصولہ، نیز اس کا عطف ’السحر‘ پر ہے یا ’ما تتلوا الشیاطین‘پر۔ امام رازی فرماتے ہیں کہ ’ما ‘کو موصولہ قرار دینا اور اس کا عطف ’السحر‘ پر کرنا زیادہ بہتر ہے ، کیونکہ جو لفظ قریب ہے، اس پر عطف کرنا بعید لفظ پر عطف کرنے سے زیادہ مستحسن ہے۔ ۸؂
آیات وسور میں باہمی ربطامام رازی قرآن مجید میں نظم کے قائل ہیں اور اپنی تفسیر میں آیات اور سورتوں کا باہمی ربط نہایت اہتمام سے بیان کرتے ہیں۔ اس حوالے سے انھوں نے جو کوششیں کی ہیں، ان کی اہمیت کے بارے میں دو رائیں ہیں۔ مولانا تقی عثمانی کا خیال یہ ہے :
’’آیتوں کے درمیان ربط ومناسبت کی جو وجہ وہ بیان فرماتے ہیں ، وہ عموماً اتنی بے تکلف، دل نشین اور معقول ہوتی ہے کہ اس پر دل نہ صرف مطمئن ہو جاتا ہے ، بلکہ اس سے قرآن کریم کی عظمت کا غیر معمولی تاثر پیدا ہوتا ہے۔ ‘‘(علوم القرآن ،۵۰۴)
جبکہ مولانا امین احسن اصلاحی فرماتے ہیں:
’’اس سلسلے میں ان کی کوششیں کچھ زیادہ مفید ثابت نہیں ہوئیں کیونکہ نظم قرآن کھولنے کے لیے جو محنت درکار تھی، اس کے لیے ان کے جیسے مصروف مصنف کے پاس فرصت مفقود تھی۔‘‘ (مبادی تدبر قرآن)
تاہم اصولی طور پر امام رازی نظم کی رعایت پر نہایت شدت سے اصرار کرتے ہیں۔ چنانچہ سورۂ حم السجدہ کی آیت ’ولوجعلناہ قرآنا اعجمیا لقالوا لو لا فصلت آیاتہ ‘ کی تفسیر میں لکھتے ہیں :
’’لوگ کہتے ہیں کہ یہ آیت ان لوگوں کے جواب میں اتری ہے جو ازراہ شرارت یہ کہتے تھے کہ اگر قرآن مجید کسی عجمی زبان میں اتارا جاتا تو بہتر ہوتا ۔ لیکن اس طرح کی باتیں کہنا میرے نزدیک کتاب الہٰی پر سخت ظلم ہے۔ اس کے معنی تو یہ ہوئے کہ قرآن کی آیتوں میں باہم دگر کوئی ربط وتعلق نہیں ہے ، حالانکہ یہ کہنا قرآن حکیم پر بہت بڑا اعتراض کرنا ہے۔ ایسی صورت میں قرآن کو معجزہ ماننا تو الگ رہا، اس کو ایک مرتب کتاب کہنا بھی مشکل ہے۔ میرے نزدیک صحیح بات یہ ہے کہ یہ سورہ شروع سے لے کر آخر تک ایک مربوط کلام ہے۔ ‘‘(التفسیرالکبیر ۲۷/ ۱۳۳)
اس کے بعد اس آیت کی تفسیر لکھ کر فرماتے ہیں:
’’ہر منصف جو انکار حق کا عادی نہیں ہے، تسلیم کرے گا کہ اگر سورہ کی تفسیر اس طرح کی جائے جس طرح ہم نے کی ہے تو پوری سورہ ایک ہی مضمون کی حامل نظر آئے گی اور اس کی تمام آیتیں ایک ہی حقیقت کی طرف اشارہ کریں گی۔ ‘‘(التفسیرالکبیر ۲۷/ ۱۳۳)

عقلی اندازامام رازی اپنے زمانے کے عقلی اور فلسفیانہ علوم کے بلند پایہ عالم تھے ۔ مسلمانوں کے مابین پیدا ہونے والے کلامی اختلافات اور ان کی مذہبی وعقلی بنیادوں پر ان کی گہری نظر تھی اور اسلام کے مختلف مسائل پر یونانی فلسفہ کے زیر اثر پیدا ہونے والے اعتراضات سے بھی وہ پوری طرح آگاہ تھے۔ چنانچہ قدرتی طور پر ان کی تفسیر پر عقلی رنگ غالب ہے اوران کی بحثوں میں ان تمام علوم کی بھرپور جھلک دکھائی دیتی ہے جن کے مطالعہ کا موقع امام صاحب کو میسر آیا تھا۔ تفسیر کبیر میں اس عقلی ذوق کا اظہار حسب ذیل صورتوں میں ہوا ہے:
۱۔ اسلامی عقائد کی براہین ودلائل سے تائید
امام صاحب نہ صرف اسلامی عقائد کا دفاع بڑی حمیت اور جوش سے کرتے ہیں ، بلکہ اس سلسلے میں معذرت خواہانہ رویہ کی بھی مذمت کرتے ہیں۔ سورۂ سبا کی آیت ۱۲ میں ذکر ہے کہ اللہ تعالیٰ نے حضرت سلیمان علیہ السلام کے لیے ہوا اور جنات کو مسخر کر دیا۔ بعض لوگوں نے اس کی تاویل یہ کی ہے کہ ہوا سے مراد تیز رفتار گھوڑے اور جنات سے مراد طاقت ور انسان ہیں۔ امام رازی یہ قول نقل کر کے لکھتے ہیں:
’’یہ بات بالکل غلط ہے۔ کہنے والے نے اس لیے کہی ہے کہ اس کا اعتقاد کمزور ہے اور اسے اللہ کی قدرت پر اعتماد نہیں ہے۔ اللہ تعالی ہر ممکن پر قادر ہیں اور یہ باتیں بھی ممکنات میں سے ہیں۔‘‘(التفسیر الکبیر۲۵/۲۴۷)
۲۔ اسلامی فرقوں کے کلامی جھگڑے
کلامی اختلافات امام صاحب کی دلچسپی کا خاص موضوع ہیں اور وہ موقع بموقع معتزلہ اور اشاعرہ کے مابین نزاعی مسائل پر بحثیں کرتے ہیں۔ امام صاحب اشاعرہ کے گرم جوش ترجمان ہیں اور جیسا کہ ہم آگے عرض کریں گے، ان کی حمایت میں حدود سے تجاوز بھی کر جاتے ہیں۔
۳۔ دینی حقائق کی عقلی تعبیر
امام صاحب کا طریقہ یہ ہے کہ ایسی آیات جن میں عقل سے ماورا حقائق کا اظہار کیا گیا ہو ، عام طریقے سے ان کی تفسیر کرنے کے بعد ان کی فلسفیانہ تعبیر بھی پیش کرتے ہیں۔
۴۔ ملحدین کے اعتراضات کے جوابات
تفسیر کبیر میں قرآنی مضامین پر ملحدین کے اعتراضات سے بکثرت تعرض کیا گیا ہے۔ ان کے جواب میں امام صاحب یا تو مناظرانہ انداز میں ان کی تردید کرتے ہیں یا آیات کی توجیہ وتاویل کر کے ان کا صحیح مفہوم واضح کرتے ہیں۔
۵۔ احکام شریعت کے اسرا ر
تفسیر کبیر میں بہت سے مقامات پر شرعی احکام کے اسرار اور ان کی حکمتیں بھی زیر بحث آئی ہیں۔ کتاب کے عمومی مزاج کے تحت ان کی توضیح میں بھی فلسفیانہ ذوق غالب ہے۔
اسرائیلیاتتفسیر بالروایت کے طریقے پر لکھی گئی کتب تفسیر میں ایک بڑا حصہ اسرائیلی روایات کا ہے۔ قرآن مجید میں امم سابقہ یا رسول اللہ کے زمانہ کے جن واقعات واحوال کا اجمالاً تذکرہ ہوا ہے، ان کی تفصیلات مہیا کرنے کے شوق میں غیر محتاط مفسرین نے بے سروپا روایات کا ایک انبار لگا دیا ہے۔ یہ روایات بالعموم روایت کے معیار کے لحاظ سے ناقابل استناد اور عقل ودرایت کے اعتبار سے بالکل بے تکی ہیں۔ اسی لیے محقق مفسرین نے ان کو اپنی تفسیروں میں جگہ دینے سے گریز کیا ہے ۔ امام رازی کا طریقہ بھی اس سلسلے میں احتیاط پر مبنی ہے۔
اسرائیلی روایات، درحقیقت ، دو طرح کی ہیں:
بعض ایسی ہیں کہ ان میں واردتفصیلات قرآن وسنت کے مسلمات سے تو نہیں ٹکراتیں ، لیکن فہم قرآن کے حوالے سے ان کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔ ایسی صورت میں امام رازی ان کو نقل تو کرتے ہیں ، لیکن ان کی تردید یا تائید کیے بغیر یہ کہہ کر گزر جاتے ہیں کہ ان سے اعتنا کرنا ایک بے کار کام ہے ، کیونکہ یہ تفسیر کے اصل مقصد کے لحاظ سے کارآمد نہیں ہیں۔
حضرت آدم علیہ السلام کو جنت میں جس درخت کا پھل کھانے سے منع کیا گیا تھا، اس کی تعیین میں تفسیری روایات مختلف ہیں۔ بعض کے مطابق یہ گیہوں کا درخت تھا، بعض کے نزدیک انگور اور بعض کے ہاں انجیر کا۔ امام رازی ان روایات کو نقل کرنے کے بعد لکھتے ہیں کہ قرآن مجید کے ظاہر الفاظ سے اس درخت کی تعیین نہیں ہوتی ، اس لیے ہم کو بھی اس تعیین کی ضرورت نہیں ، کیونکہ اس قصہ کا یہ مقصد نہیں ہے کہ ہم کو متعین طور پر اس درخت کا علم ہو۔ جو چیز کلام کا اصل مقصود نہیں ہوتی، اس کی توضیح بعض اوقات غیر ضروری ہوتی ہے۔ ۹؂
قرآن مجید میں مذکور قیامت کی علامات میں ایک علامت دابۃ الارض کا نکلنا بھی ہے۔ مفسرین نے اس جانور کے حجم، اس کی خلقت اور اس کے نکلنے کے طریقے کے متعلق بے شمار روایات اکٹھی کی ہیں، لیکن امام رازی فرماتے ہیں کہ قرآ ن مجید سے ان میں سے کوئی بات ثابت نہیں ہوتی ، اس لیے اگر ان کے متعلق رسول اللہ سے کوئی حدیث مروی ہو تو وہ قبول کر لی جائے گی ، ورنہ وہ ناقابل التفات قرار پائے گی۔ ۱۰؂
اسی طرح حضرت نوح علیہ السلام کی کشتی کی ساخت اور اس کی لمبائی چوڑائی کے متعلق مختلف تفسیری اقوال نقل کر کے لکھتے ہیں کہ اس قسم کی بحثیں مجھے اچھی نہیں لگتیں ، کیونکہ ان کا علم غیر ضروری ہے اور اس سے کوئی فائدہ نہیں اور ان میں غور و فکر کرنا فضول ہے، بالخصوص ایسی حالت میں جبکہ ہم کو یقین ہے کہ اس جگہ کوئی ایسی دلیل نہیں ہے جو صحیح جانب پر دلالت کرے۔ ۱۱؂
دوسری قسم ان روایات کی ہے جوقرآن وسنت کے مسلمات کے صریح معارض اور ان کی بنیاد کو ڈھا دینے والی ہیں۔ ایسی روایات بالعموم بعض انبیا سابقین کے واقعات کے تحت نقل ہوئی ہیں۔ تمام محقق مفسرین نے ان کی تردید کی ہے، چنانچہ امام رازی نے بھی حسب ذیل روایات کو بے اصل قرار دیا ہے :
واقعہ ہاروت وماروت کے ضمن میں مروی روایات جن کے مطابق یہ دونوں فرشتے تھے جو زمین پر بھیجے گئے اور ایک عورت کے ساتھ بدکاری کی خواہش میں بت پرستی ،شراب نوشی اور قتل کے مرتکب ہوئے۔ ۱۲؂
سورۂ اعراف کی آیت ۲۴ کے الفاظ ’فلما آتاھما صالحا جعلا لہ شرکاء فی ما آتاھما‘ کے تحت مروی روایت جس میں ذکر ہے کہ اس آیت میں حضرت آدم علیہ السلام اور حضرت حوا علیہا السلام کا ذکر ہے جنھوں نے ابلیس کے ورغلانے میں آکر اپنے بیٹے کا نام عبد الحارث رکھ دیا۔ ۱۳؂
حضرت یوسف علیہ السلام کے واقعہ کے ضمن میں مروی روایت جس کے مطابق حضرت یوسف علیہ السلام آمادۂ گناہ ہو گئے تھے جس پراللہ تعالیٰ نے حضرت جبرئیل علیہ السلام کو بھیجا جنھوں نے ان کو دھکیل کر ہٹایا اور وہ بالکل ناکارہ ہو گئے۔ ۱۴؂
حضرت داؤد علیہ السلام کے واقعہ کے تحت مروی روایات جن کے مطابق حضرت داؤد علیہ السلام اوریا کی بیوی پر فریفتہ ہو گئے اور اس کے خاوند کو قتل کرا کے اس سے نکاح کر لیا۔ ۱۵؂
نقائصاپنی تمام تر افادیت اور خوبیوں کے باوجود تفسیر کبیر خامیوں سے پاک نہیں ہے ۔ ہم ذیل میں ان چند امور کا ذکر کرتے ہیں جن پر اہل علم نے اعتراض کیا ہے۔
غیر متعلق مباحث کی کثرتتفسیر کبیر کے ایسے عقلی مباحث جن سے منصوصات کی تائید یا ان کی تفہیم میں مدد ملتی ہے، ان کی تمام منصف مزاج اہل علم نے قدر کی ہے۔ لیکن یہ حقیقت بھی ناقابل انکار ہے کہ اس تفسیر میں ایک بڑا ذخیرہ ایسے فنی مباحث کا بھی ہے جن کا قرآن کی تاویل وتشریح سے کوئی تعلق نہیں اور جنھیں امام صاحب نے محض اپنے عقلی ذوق کی تشفی کے لیے تفسیر کا حصہ بنا دیا ہے۔ محمد حسین ذہبی لکھتے ہیں:
’’تفسیر دیکھنے سے ظاہر ہے کہ امام رازی کو زیادہ سے زیادہ نکتے استنباط کرنے اور دائرۂ گفتگو کو وسیع سے وسیع تر کرنے کا ازحد شوق ہے۔قرآن کے الفاظ سے کسی موضوع کا ذرا بھی تعلق نظر آئے تو وہ اس کو دائرۂ بحث میں لے آتے اور اس سے متعلق نکات استنباط کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ ‘‘ (التفسیر والمفسرون ۱/ ۲۹۶)
تفسیر کے مقدمہ میں خود فرماتے ہیں کہ ایک دفعہ ان کی زبان سے یہ بات نکلی کہ سورۂ فاتحہ سے دس ہزار فوائد اور نکات استنباط کیے جا سکتے ہیں ، لیکن بعض لوگوں نے اس کو ناممکن قرار دیا۔ چنانچہ میں نے اس بات کو ممکن الحصول ثابت کرنے کے لیے فاتحہ کی تفسیر میں اس قدر تطویل سے کام لیا ہے۔ ۱۶؂ (تفسیر کبیر میں سورۂ فاتحہ کی تفسیر ۲۹۰ صفحات کو محیط ہے) ۔ اس ذوق کا نتیجہ یہ ہے کہ کتاب کا ایک بہت بڑا حصہ ریاضی، طیبعیات، ہیئت، فلکیات، فلسفہ اور علم کلام کے طویل مباحث کی نذر کر دیا گیا ہے۔
تفسیر کبیر کا یہ پہلو غالباً تمام اہل علم کی نظروں میں کھٹکا ہے اور اس حوالے سے اس پر تنقید کی گئی ہے۔ سیوطی لکھتے ہیں :
’’صاحب علوم عقلیہ بالخصوص امام رازی نے اپنی تفسیر کو حکما، فلاسفہ اور اور ان جیسے لوگوں کے اقوال سے بھر دیا اور ایک چیز کو چھوڑ کر دوسری چیز کی طرف اس طرح نکل گئے کہ دیکھنے والا تعجب کرتا ہے کہ آیت کے موقع ومحل سے اس کو کیا مطابقت ہے؟ ابو حیان بحر میں لکھتے ہیں کہ امام رازی نے اپنی تفسیر میں بہت سی طویل چیزوں کو جمع کر دیا ہے، جن کی ضرورت علم تفسیر میں نہیں ، اسی لیے بعض علما نے کہا ہے کہ تفسیر کبیر میں ہر چیز ہے، صرف ایک تفسیر نہیں ہے۔ ‘‘(السیوطی، جلال الدین عبد الرحمن: الاتقان ۲/ ۱۹۰)
الدکتور محمد حسین ذہبی بھی اس کی تائید کرتے ہیں :
’’خلاصہ کلام یہ ہے کہ اس کتاب کو علم کلام اور طبیعی وکائناتی علوم کا انسائیکلو پیڈیا کہنا زیادہ بہتر ہے ، کیونکہ یہ پہلو اس پر اس قدر غالب ہے کہ اس کی تفسیر ہونے کی حیثیت دب کر رہ گئی ہے۔‘‘ ( التفسیر والمفسرون ۱/ ۲۹۵)

متکلمانہ جانب داریتفسیر کبیر پر دوسرا اعتراض یہ ہے کہ اس میں امام صاحب نے کلامی جھگڑوں کے حوالے سے ایک خاص نقطۂ نظر کی وکالت کی کوشش کی ہے۔ اس ضمن میں مولانا امین احسن اصلاحی کی رائے حسب ذیل ہے:
’’مسلمانوں کا تعلق جب عجمی قوموں سے ہوا اور ان کے علوم اور ان کے فلسفہ سے ان کو سابقہ پڑا تو دینی مسائل پر سوچنے کا وہ انداز فکر وجود میں آیا جس کو ہم علم کلام کے نام سے موسوم کرتے ہیں۔ اس علم کلام نے بھی ہمارے اندر مختلف مکتب خیال پیدا کیے اور ان میں سے ہر مکتب خیال کے لوگوں نے اپنے مخصوص افکار ونظریات کو مسلمانوں میں مقبول بنانے کے لیے قرآن مجید کی تفسیریں لکھیں۔ ان تفسیروں کا مقصد ، درحقیقت قرآن مجید کی تفسیر لکھنے سے زیادہ ان افکار ونظریات کے دلائل فراہم کرنا تھا جو ان تفسیروں کے لکھنے والوں نے اپنے متکلمانہ طرز فکر سے پیدا کیے تھے۔ اس طرز پر ہمارے ہاں جو تفسیریں لکھی گئیں، ان میں سب سے زیادہ مشہور اور اہمیت رکھنے والی تفسیریں دو ہیں : ایک علامہ زمخشری رحمۃ اللہ علیہ کی تفسیر کشاف اور دوسری امام رازی رحمۃ اللہ علیہ کی تفسیر کبیر۔ ان میں سے مقدم الذکر معتزلہ کے مکتب خیال کے ترجمان ہیں اور موخر الذکر اپنی تفسیر میں ہر جگہ اشاعرہ کے نظریات کی وکالت کرتے ہیں۔‘‘ (مبادی تدبر قرآن ۱۸۵)
اشعریت کی حمایت میں امام رازی کے اس غلو کی شکایت علامہ شبلی نعمانی نے بھی کی ہے:
’’امام صاحب نے علم کلام کی بنیاد اشاعرہ کے عقائد پر قائم کی اور اس سینہ زوری سے اس کی حمایت کی کہ اشاعرہ کے جو مسائل تاویل کے محتاج تھے، ان میں تاویل کا سہارا بھی نہ رکھا اور پھر ان کی صحت پر سیکڑوں دلیلیں قائم کیں۔ مثلاً اشاعرہ اس بات کے قائل تھے کہ انسان اپنے افعال پر قدرت موثرہ نہیں رکھتا ، تاہم جبر سے بچنے کے لیے انھوں نے کسب کا پردہ لگا رکھا تھا۔ امام صاحب نے یہ پردہ بھی اٹھا دیا اور صاف صاف جبر کا دعویٰ کیا۔ چنانچہ تفسیر کبیر میں جا بجا اس دعویٰ کی تصریح کی ہے اور اس پر دلیلیں قائم کی ہیں۔ اسی طرح خدا کے افعال کا بغیر کسی مصلحت وحکمت کے ہونا، حسن وقبح کا عقلی نہ ہونا، زندگی کے لیے جسم کا مشروط نہ ہونا، دیکھنے کے لیے لون وجسم وجہت کا مشروط نہ ہونا، کسی شے میں کسی خاصیت کا نہ ہونا، اشیاء میں سبب ومسبب کا سلسلہ نہ ہونا وغیرہ وغیرہ۔ ان تمام مسائل پر سیکڑوں دلیلیں قائم کیں اور انھی مسائل کو اعتزال اور سنیت کا معیار قرار دیا ، چنانچہ ان کی تمام کتب کلامیہ اور تفسیر کبیر انھی مباحث سے بھری پڑی ہیں ۔‘‘ (شبلی نعمانی، الکلام ۶۳)
ایک مثال سے امام رازی کے اس طرز فکر کا اندازہ کیا جا سکتا ہے:
امام رازی اور تمام اشاعرہ اس بات کے قائل ہیں کہ اللہ تعالیٰ بندوں کو تکلیف ما لا یطاق دیتا ہے ،یعنی ان پر ایسا بوجھ ڈالتا ہے جس کو اٹھانے کی وہ طاقت نہیں رکھتے۔ اس پر انھوں نے اپنی تفسیر میں مختلف آیات کے ذیل میں متعدد دلیلیں بیان کی ہیں۔ لیکن سورہ بقرہ کی آخری آیت واضح طور پر ان کے اس مسلک کی تردید کرتی ہے۔ ارشاد باری ہے : ’لا یکلف اللّٰہ نفسا الا وسعھا‘۔ ’’اللہ تعالیٰ کسی انسان پر اس کی طاقت سے بڑھ کر بوجھ نہیں ڈالتا۔‘‘ اس آیت کی تفسیر میں انھوں نے متعدد تاویلات سے آیت کے واضح مفہوم کو پلٹنے کی کوشش کی ہے ، لیکن ان کی کمزوری کو محسوس کرتے ہوئے دوسری جگہ ایک عجیب دلیل دیتے ہوئے آیت کے ظاہری مفہوم کو رد کر دیا ہے ۔ لکھتے ہیں :
’’جب کہ ایک مسئلہ اپنی جگہ پر قطعی یقینی ہو تو اس کے بارے میں ظنی اور کمزور دلائل کی بنا پر کچھ کہنا ناجائز ہے۔ مثلاً ’لایکلف اللہ نفسا الا وسعھا‘ کے متعلق قطعی دلائل سے ثابت ہو چکا ہے کہ اس کی قسم کی تکلیف ما لا یطاق اللہ تعالیٰ اپنے بندوں کو دیتا ہے۔ ہم اس آیت کی تفسیر کے ذیل میں اس کی تائید میں پانچ نہایت محکم دلیلیں لکھ چکے ہیں۔ پس ظاہر ہے کہ اس سے اللہ تعالیٰ کی مراد وہ نہیں ہو سکتی جو ظاہر آیت سے معلوم ہوتی ہے۔ ‘‘ (التفسیر الکبیر بحوالہ مبادی تدبر قرآن)

اہل السنۃ کی کمزور ترجمانیبعض علما کی رائے یہ ہے کہ تفسیر کبیر میں باطل فرقوں کا استدلال تو نہایت بھرپور طریقے سے پیش کیا گیا ہے لیکن اس کے مقابلے میں اہل سنت کی ترجمانی کمزور طریقے سے کی گئی ہے۔ ابن حجر لکھتے ہیں :
’’ان پر یہ اعتراض ہے کہ قوی شبہات پیش کرتے ہیں ، لیکن ان کا تسلی بخش جواب دینے سے عاجز رہ جاتے ہیں، چنانچہ مغرب کے بعض علما نے کہا کہ ان کے اعتراضات نقد ہوتے ہیں اور جواب ادھار۔ شیخ سراج الدین ان پرسخت اعتراض کرتے اور کہتے تھے کہ دین کے مخالفین کے اعتراضات تو نہایت قوت اور زور سے بیان کرتے ہیں ، لیکن اہل سنت کی ترجمانی نہایت کمزور طریقے سے کرتے ہیں۔‘‘ ( التفسیر والمفسرون ۱/ ۲۹۵)
مخالف کے استدلال کو پوری قوت سے پیش کرنے کی عادت کا خود امام رازی نے بھی اعتراف کیا ہے۔ ’نہایۃ العقول‘ کے مقدمے میں لکھتے ہیں کہ وہ مخالف کے استدلال کو اس عمدگی سے پیش کریں گے کہ اگر مخالف خود بھی چاہے تو اس سے اچھے طریقے سے پیش نہ کر سکے گا۔ ۱۷؂

Download links:

Arabic:
الناشر: دار الفكر
الجزء الأول: الفاتحة
الجزء الثاني: البقرة 1 – 34
الجزء الثالث: البقرة 35 – 109
الجزء الرابع: البقرة 110 – 167
الجزء الخامس: البقرة 168 – 210
الجزء السادس: البقرة 211 – 254
الجزء السابع: البقرة 255 – آل عمران 25
الجزء الثامن: آل عمران 26 – 129
الجزء التاسع: آل عمران 130 – النساء 16
الجزء العاشر: النساء 17 – 93
الجزء الحادي عشر: النساء 94 – المائدة 43
الجزء الثاني عشر: المائدة 44 – الأنعام 53
الجزء الثالث عشر: الأنعام 54 – 152
الجزء الرابع عشر: الأنعام 153 – الأعراف 145
الجزء الخامس عشر: الأعراف 146 – التوبة 13
الجزء السادس عشر: التوبة 14 – آخرها
الجزء السابع عشر: يونس – هود 44
الجزء الثامن عشر: هود 45 – الرعد 2
الجزء التاسع عشر: الرعد 3 – النحل 11
الجزء العشرون: النحل 12 – الإسراء 60
الجزء الحادي والعشرون: الإسراء 61 – مريم
الجزء الثاني والعشرون: طه – الأنبياء
الجزء الثالث والعشرون: الحج – النور 35
الجزء الرابع والعشرون: النور 36 – القصص 55
الجزء الخامس والعشرون: القصص 56 – سبأ
الجزء السادس والعشرون: فاطر – الزمر 52
الجزء السابع والعشرون: الزمر 53 – الجاثية
الجزء الثامن والعشرون: الأحقاف – النجم 29
الجزء التاسع والعشرون: النجم 30 – الصف
الجزء الثلاثون: الجمعة – المرسلات
الجزء الحادي والثلاثون: النبأ – الضحى
الجزء الثاني والثلاثون: الشرح – الناس
الواجهة

Alternate  download in Arabic:
Read:
010203, 04, 05, 06, 07, 08, 09, 10, 11, 12, 13, 14, 15, 16, 17, 18,
19, 20, 21, 22, 23, 24, 25, 26, 27, 28, 29, 30, 31, 32
Download:
01, 02, 03, 04, 05, 06, 07, 08, 09, 10, 11121314, 151617, 18
192021, 22, 23, 24, 2526272829303132

Urdu:

سفر صغیر ترجمہ تفسیر الکبیر فخر الدین رازی – مترجم محمد اسحٰق دہلوی – مصلح المطابع واقع دہلی جلد 01
Download

Jild 2
Read Download

Tafseer Jawahir  ul Quran
جواہر القرآن – مولانا غلام اللہ خان

Picture

Urdu:
Vol1: Read Download
Vol2: Read / Download
Vol3: Read / Download
Vol4: Read / Download

FREE E-BOOKS

DOWNLOAD & READ ONLINE

The MIR Books a non-profit, is building a digital library of  Internet sites and other cultural artifacts in digital form. Like a paper library, we provide free access to researchers, historians, scholars,  and the general public. Our mission is to provide Universal Access to All Knowledge.